Shab e Qadr Ke Fazail w Aamal

 

Shab e Qadr Ke Fazail w Aamal

Virtues and deeds of Laylat al-Qadr
Thara Ahmad Al-Misbahi, Jamia Millia Islamia, Delhi, Allah Almighty says in the Holy Quran
Verily, We sent it down on the Night of Destiny, and you know what it is. And We sent it down on the Night of Destiny, and you know the Night of Destiny. The Night of Destiny is better than a thousand months, in which angels and spirits, with the permission of their Lord, tons of angels and Gabriel descend.
Amra Salam is safe even for the informed Fajr work until it is ripe. Gentlemen! How important and blessed is the night of Qadr that a whole surah was revealed in its glory and the most important and holy book of the Qur’an was revealed on that night, and the worship of this night is better than the worship of a thousand months. Declared Eighty-three years of a thousand months are four months. Now imagine that if one has attained the bliss of Shab-e-Qadr only once in his life, it is as if he has worshiped Darsa for more than eighty-three years and four months. And Allah and His Messenger know best. Praise be to Allah, this is the place of greatness and exaltation of this night, so we all Muslims should eat the significance of this night, and do not spend this night in negligence, but spend a lot of worship, repentance and asking for forgiveness this night. ۔ The Glorious Revelation In the light of the revelation of the Glorious Qur’an, some commentators have narrated a very believable hadith which summarizes that the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) once said to his Companions: In front of the Ajmeen, a saint of the children of Israel and a devout worshiper of the night, Hazrat Shimon (may Allah have mercy on him) said:
That Hazrat Shimon worshiped for a thousand months in such a way that he used to stay up at night and fast during the day as well as fight with the disbelievers in the way of Allah Almighty. When the Companions heard about this state of their worship and modesty, they Simon became very jealous and offered the month of Prophethood in the service of the Holy Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him). We are very young, part of it

 

 

Passes in sleep, then some in demand, then some in cooking and otherworldly affairs, so we

 

We cannot worship like Simon, which means that we cannot go beyond the children of Israel in worship, nor can we compete with them! So the mourners of the ummah were very saddened to hear this, but the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) was very saddened to hear this, but he was saddened by the grief of his beloved, so at that time Gabriel Amin (peace and blessings of Allaah be upon him) Do not be sad, Allah Almighty has blessed your ummah with one night every year that if they worship me on that night, it will exceed the thousand months of worship of Hazrat Simon. (Faizan Sunnah, page 2) The reason for the name of Laylat al-Qadr is called Laylat al-Qadr because it is the destiny of the servants to make up for it. Allaah says (interpretation of the meaning): “There is no difference between the two.” Hazrat Ibn Abbas (may Allah be pleased with him) said that Allah Almighty had destined this year’s sustenance, rain, life and death (keeping it alive and killing it) for the coming year in the same night that He would entrust it to the affairs. Is. The office of sustenance, plants and rain is entrusted to Michael (as), the office of wars, winds, earthquakes, lightning and the letter (waatzna) to Gabriel (as), the office of deeds to Israel (as) and the office of suffering to Azrael (as).
(Tafsir Ruhul Bayan, Volume 3 Asfar 2) In the light of Laylat al-Qadr Hadith (1) Hazrat Anas bin Malik (may Allah be pleased with him) says that once the month of Ramadan came, the Crown Prince of Madinah Sarwar Qalb Wasin A month has come to you in which there is a night which is better than a thousand months. A person who is deprived of that night is as if he has been deprived of all goodness and is not deprived of his goodness, but that person is deprived of joy. (Ibn Majah) (2) In a long hadith, Hazrat Abdullah bin Abbas (may Allah be pleased with him) narrated that the government of Madinah (peace be upon him)
He said: When the Night of Destiny comes, by the command of Allah Almighty, Gabriel (peace be upon him) descends on the earth with a huge army of angels for a green flag and defeats this green flag on Makkah. There are hundreds of wings, two of which are opened only at night, and they are spread out in the east, east and west, then Gabriel (peace be upon him) lowers the angels.

It is said that any Muslim who is engaged in prayers with a remembrance of Allah tonight should stay away from Islam.
Also, I say to their mothers, this chain continues till Chanchin, if not, then Gabriel (peace be upon him) orders the angels to go back again, the angels say: O Gabriel (peace be upon him)! God is my beloved
What did the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) say about the needs of the ummah? Gabriel (peace and blessings of Allaah be upon him) said: Allaah has given special attention to them and has forgiven them all except four kinds of people. The Companions said: O Messenger of Allaah (peace and blessings of Allaah be upon him)! Who are the people of Chartham? He said: (1) the alcoholic, (2) disobedient to his parents, (3) those who have no mercy (ie, those who break off relations with relatives), (3) those who have hatred and enmity with each other, and are estranged from each other. (2) The Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) said: Whoever recites the whole word three times on the night of Qadr, Laa ilaaha ill-Allaah Muhammad, the Messenger of Allaah (peace and blessings of Allaah be upon him), then Allaah forgives him for the first time and for the second time. By reciting it, Allaah has freed him from Hell, and by reciting it a third time, He has made him enter Paradise (Faizan Sunnah with reference to Dar al-Nasaheen). (1) The Holy Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) said: But Allah will forbid the fire of Hell and Allah will meet all his good needs (Faizan Sunnah wal Fazail al-Shohur wa Al-Ayyam) The Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) said: Whoever keeps alive the twenty-seventh night of Ramadaan, Allaah will write a reward of twenty-seven thousand years for him, and Allaah will make for him a house in Paradise whose number Allaah Only he knows
Faizan Sunnah and Virtues of Famous Days (1) The Master of the Universe Hazrat Ali (may Allah bless him and grant him peace) says that whoever recites Surah Al-Qadr seven times in Shab-e-Qadr
And seventy thousand angels pray for Paradise for him, and whoever prays (whenever) three times before the Friday prayer on Friday, Allah writes down good deeds equal to the number of those who perform the prayer on that day. ۔ (2) Hazrat Ayesha Siddiqah (may Allah be pleased with her) said: I offered my service to the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) or to the Messenger of Allaah (peace and blessings of Allaah be upon him) if I had knowledge of Laylat al-Qadr. What should I read? The Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) said:

 

ليلة القدر، کے فضائل و اعمال
ثاراحمد المصباحی، جامعہ ملیہ اسلامیہ دہلی اللہ تبارک وتعالی قرآن پاک میں ارشاد فرماتا ہے
انا ا لسنة في ليلة القدره وما أدرك ما ليل بے شک ہم نے اسے شب قدر میں اتارا اور تم نے جانا القدره ليلة القدره ځير ممن ألف شهره تن کیا شب قدر؟ شب قدر ہزار مہینوں سے بہتر ، اس میں الملائكة والروح فيها باذن ربهم ټن ګلي فرشتے اور جبریل اترتے ہیں اپنے رب کے حکم سے ہر
أمره سلم هي حتى مطلع الفجره کام کے لئے وہ سلامتی ہے پکنے تک۔ حضرات ! شب قدر کس قدر اہم اور برکت والی رات ہے کہ اس کی شان مبارکہ میں پوری ایک سورت نازل فرمائی گئی اور قرآن کی اہم اور مقدس کتاب بھی اسی رات میں اتاری گئی ، اور اس رات کی عبادت کو ایک ہزار مہینوں کی عبادت سے بھی افضل قرار دیا۔ گیا، ایک ہزار مہینے کے تراسی سال چار ماہ ہوتے ہیں اب اندازہ لگائیے کہ جس نے زندگی میں صرف ایک بار اگر شب قدر کی سعادت حاصل کر لی تو گویا اس نے تراسی سال چار ماہ سے بھی زیاد درصہ کی عبادت کی ۔ اور اس زیادتی کا علم تو اللہ اور اس کے رسول ہی کو ہے۔ سبحان اللہ یہ ہے اس رات کی عظمت و رفعت کا مقام، لہذا ہم سب مسلمانوں کو چاہئے کہ اس رات کی اہمیت کو کھے، اور اس رات کو غفلت میں نہ گزار ہیں بلکہ اس رات کو عبادت ، توبہ اور استغفار کی خوب خوب کثرت کریں۔ شان نزول واقعه کی روشنی میں اس سورہ مبارکہ کا شان نزول بیان کرتے ہوئے بعض مفسرین کرام نے ایک نہایت ہی ایمان افروز حدیث بیان کی ہے جس کا خلاصہ یہ ہے کہ رسول الله صلی اللہ تعالی علیہ وسلم نے ایک مرتبہ صحابہ کرام رضوان الله تعالی علیہم اجمعین کے سامنے بنی اسرائیل کے ایک ولی اور عابد شب زنده دار حضرت شمعون رحمتہ اللہ تعالی علیہ (تفسیر روح البیان میں شمسون آیا ہے) کا ذکر کرتے ہوئے فرمایا۔
کہ حضرت شمعون نے ہزار ماہ اس طرح عبادت کی کہ رات کو قیام اور دن کو روزہ رکھنے کے ساتھ ساتھ الله تعالی کی راہ میں کفار کے ساتھ جہاد کرتے تھے، حضرات صحابہ کرام نے جب ان کی عبادت وریاضت کا یہ حال سنا تو انہیں حضرت شمعون پر بڑا رشک آیا اور ماہ نبوت آقانے رحمت صلی اللہ تعالی علیہ وسلم کی خدمت میں عرض کیا یا رسول اللہ ! ہمیں تو بہت تھوڑی عمر کی ہے، اس میں بھی کچھ حصہ

 

نیند میں گزر جاتا ہے، تو کچھ طلب معاش میں ، تو کچھ کھانے پکانے اور دیگر امور دنیوی میں صرفت ہو جاتا ہے، لہذا ہم تو

 

حضرت شمعون کی طرح عبادت کر ہی نہیں سکتے ، اسکا مطلب یہ ہے کہ ہم لوگ بنی اسرائیل سے عبادت میں بڑھ ہی نہیں سکتے ہیں اور نہ ان کا ہم مقابلہ کر سکتے ہیں! چنانچہ امت کے غم خواہ آقائے دو عالم صلی الله تعالی علیہ وسلم یہ سن کر بہت غمگین ہوئے مگر ان کو اپنے مجوب کا غم کی کر پند ہو چنانچہ اسی وقت سدرہ کے کین جبرئیل امین علیہ السلام حاضر خدمت ہوئے اور عرض کیا اے پیارے حبیب صلی اللہ تعالی علیہ وسلم) آپ رنجیدہ نہ ہوں ، آپ کی امت کو اللہ نے ہر سال میں ایک ایک رات عنایت فرما دی کہ اگر وہ اس رات میں میری عبادت کریں گے تو حضرت شمعون کے ہزار ماہ کی عبادت سے بھی بڑھ جائیں گے ۔ (فیضان سنت صفحه ۱۲۰۹)| ليلة القدر کی وجه تسمیه ليلة القدر کولیلة القدر اس لیے کہا جا تا ہے کہ اس میں بندوں کی قضاء وقدر مقدر ہوتی ہے، اللہ تعالی فرماتا ہے’فيها يفرق كل امر ح کیم ‘‘اس میں ہرامرکلیم کا فرق لکھا جاتا ہے۔ حضرت ابن عباس رضی اللہ تعالی عنہما نے فرمایا کہ الله تعالی اس سال کا رزق ، بارش ، حیات اور موت (این زندہ رکھنا اور مارنا) وغیرہ اسی رات میں آنے والے سال کے لئے مقدر فرما کر ملا کہ مد برات الامور کے سپرد فرما دیتا ہے۔ رزق ، نباتات اور بارش کا دفتر میکائیل علیہ السلام کو جنگیں ، ہوائیں ، زلزلے ، صواعق اور حرف ( وتعضنا) کا دفتر جبرئیل علیہ السلام کو ، اعمال کا دفتر اسرائیل علیہ السلام کو اور مصائب کا عزرائیل علیہ السلام کو سپرد کیا جا تا ہے۔
(تفسیر روح البیان ، جلد۵ اصفر ۳۸۴) ليلة القدرحدیث کی روشنی میں (1) حضرت سیدنا انس بن مالک رضی اللہ تعالی عنہ فرماتے ہیں کہ ایک بار جب ماه رمضان تشریف آیا تو تاجدار مدینہ سرور قلب وسین صلی اللہ تعالی علیہ وسلم نے فرمایا کہ تمہارے پاس ایک مہینہ آیا ہے جس میں ایک رات ایسی بھی ہے جو ہزار مہینوں سے افضل ہے جوشخص اس رات سے محروم رہ گیا گویا تمام کی تمام بھلائی سے محروم رہ گیا اور اس کی بھلائی سے محروم نہیں رہتامگر وہ شخص جوية محروم ہی ہے۔ (ابن ماجہ) (۲) ایک طویل حدیث میں حضرت سیدنا عبد الله بن عباس رضی اللہ تعالی عنہما نے روایت کیا ہے کہ سرکار مدینہ صلی اللہ تعالی علیہ وسلم
نے فرمایا جب شب قدر آتی ہے تو اللہ عزوجل کے حکم سے حضرت جبرئیل علیہ السلام ایک سبز جھنڈا لئے فرشتوں کی بہت بڑی فوج کے ساتھ زمین پر زول فرماتے ہیں اور اس سبز جھنڈے کو مکہ معظمہ پر ہرا دیتے ہیں، حضرت جبرئیل علیہ السلام کے سو بازو ہیں جن میں سے دو بار وصرف اس رات کھولتے ہیں وہ باز ومشرق ومغرف میں پھیل جاتے ہیں ، پھر حضرت جبرئیل علیہ السلام فرشتوں کو کم

یتے ہیں کہ جو کوئی مسلمان آج رات قیام میں نماز با ذکر اللہ میں مشغول ہے اس سے اسلام و مصافہ کرو،
نیز ان کی عاؤں پر میں بھی کہو، چنانچین تک یہی سلسلہ رہتا ہے نہ ہونے پر حضرت جبرئیل علیہ السلام فرشتوں کو پھر واپس چلنے کا حکم صادر فرماتے ہیں ، فرشتے عرض کرتے ہیں اے جبرئیل علیہ السلام ! اللہ نے اپنے پیارے
حبیب صلی اللہ تعالی علیہ وسلم کی امت کی حاجات کے بارے میں کیا کیا؟ حضرت جبرئیل علیہ السلام فرماتے ہیں اللہ نے ان لوگوں پر خصوصی نظر کرم فرمائی اور چارقسم کے لوگوں کے علا وہ تمام لوگوں کو معاف فرمادیا صحابہ کرام نے عرض کیا یا رسول الله صلی اللہ تعالی علیہ وسلم ! وہ چارتم کے لوگ کون سے ہیں؟ ارشادفرمایا (1) شرابی کا عادی (۲) والدین کے نا فرمان (۳) قطع رحم کرنے والے (یعنی رشتہ داروں سے رشتہ توڑنے والے) (۳) جو آپس میں بغض و کینہ رکھتے ہیں، اور آپس میں قطع تعلق کرتے ہیں۔ (۳) رسول الله صلی اللہ تعالی علیہ وسلم نے فرمایا جس نے شب قدر میں تین مرتبہ پورا کلمہ پڑھالین لا الہ الا الله محمد رسول ( اللصلی اللہ تعالی علیہ وسلم) پڑھا تو پہلی مرتبہ پڑھنے سے اللہ تعالی مغفرت فرما دیا ہے اور دوسری مرتبہ پڑھنے سے اللہ تعالی جہنم سے آزاد فرما دیا ہے، اور تیسری مرتبہ پڑھنے سے داخل جنت فرما دیتا ہے(فیضان سنت بحوالہ درة الناصحين) (۴) رسول اکرم صلی الله تعالی علیہ وسلم نے فرمایا جس نے شب قدر کو پایا تو اللہ تعالی اس پر دوزخ کی آگ حرام فرما دے گا اور اللہ تعالی اس کی تمام نیک حاجتوں کو پورا فرمائے گا (فیضان سنت والفضائل الشهور والايام) (۵) رسول اکرم صلی اللہ تعالی علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا جو رمضان المبارک کی ستائیسویں شب کو زندہ رکھے گا تو الله تعالی اس کے لئے ستائیس ہزار سال کا ثواب لکھتا ہے، اور الله تعالی اس کے لئے جنت میں گھر بناتا ہے جن کی تعدا د الله تعالی ہی جانتا ہے۔
فیضان سنت والفضائل الشهور والايام) (1) مولائے کائنات حضرت علی کرم اللہ وجہ الکریم فرماتے ہیں جو کوئی شب قدر میں سورہ قدر سات بار پڑھتا ہے الدراسے ہر بلا
سے محفوظ فرمادیتا ہے، اور ستر ہزار فرشتے اس کے لئے جنت کی دعا کرتے ہیں اور جو کوئی (جب بھی) جمعہ کے روز نماز جمعہ سے قبل تین بار پڑھتا ہے اللہ اس روز کے تمام نماز پڑھنے والوں کی تعداد کے برابر نیکیاں لکھتا ہے۔ (فیضان سنت بحوالہ نزہتہ المجالس) (2) حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ تعالی عنہا فرماتی ہیں میں نے اپنے مسرتاج صاحب معراج صلی اللہ تعالی علیہ وسلم کی خدمت میں عرض کیا یا رسول الل صلی اللہ تعالی علیہ وسلم اگر مجھے شب قدر کا علم ہو جائے تو کیا پڑھوں؟ سرکا مصطفی صلی اللہ تعالی علیہ وسلم نے فرمایا

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.