ik main hi nahi un par qurban zamana hai lyrics in roman urdu hindi

ik main hi nahi un par qurban zamana hai lyrics in roman urdu hindi
Ik Main Hi Nahi Un (S.A.W) Par Qurban Zamanah Hai
Jo Rab E Do Aalam Ka Mehboob Yagana Hai

Aao Dar E Zahra Par Phelaye Hue Daman
Hai Nasal Kareemon Ki Lajpal Gharana Hai

Kal Pul Se Hamain Jis Ne Khud Paar Lagana Hai
Zahra(R.A) Ka Wo Baba Hai Hasnain Ka Nana Hai
Sayeda Ka Woh Baba Hai Hasnain Ka Nana Hai

Izzat Se Na Mar Jayein Keyun Naam E Muhammad Par
Youn Bhi Kisi Din Ham Ne Dunya Se To Jana Hai

Sarkar E Madina Ki Hun Pusht Panahi Mein
Dunya Ki Hy Keya Parwah Dushman Jo Zamana Hai

Ye Keh Ke Dar E Haq Say Li Maut Ne Kuch Mohlat
Milad Ki Aamad Hai Mehfil Ko Sajana Hai

Is Hashmi Dulha Par Konain Ko Mein Vaarun
Jo Husn O Shamail Mein Yaktae Zamana Hai

So Baar Agar Tauba Tooti Bhi To Kya Herat
Bakhshish Ki Rivayat Mein Tauba To Bahana Hai

Pur Noor Si Rahein Hain, Gunbad Pe Nigahein Hain
Jalwey Bhi Anokhay Hain, Manzar Bhi Suhana Hai

Qurban Us Aaqa Par Kal Hashar Ke Din Jisnay
Iss Ummat E Aasi Ko Kamli Mein Chupana Hai

Har Waqt Woh Hain Meri Dunya E Tasawar Mein
Ae Shoq Kahin Ab To Aana Hai Na Jana Hai

Mahroom Karam Is Ko Rakhye Nah Sar E Mehshar
Jaisa Hai Naseer Aakhir Sayel To Purana Hai

Ik Main Hi Nahi Un (S.A.W) Par Qurban Zamanah Hai
Jo Rab E Do Aalam Ka Mehboob Yagana Hai
ik main hi nahi un par qurban zamana hai lyrics in urdu image

اک میں ہی نہیں ان پر قربان زمانہ ہے
جو ربِ دوعالم کا محبوب یگانہ ہے

کل جس نے ہمیں پُل سے خود پار لگانا ہے
زہرہ کا وہ بابا ہے ، سبطین کا نانا ہے

اس ہاشمی دولہا پر کونین کو میں واروں
جو حسن و شمائل میں یکتائے زمانہ ہے

عزت سے نہ مر جائیں کیوں نام محمد پر
ہم نے کسی دن یوں بھی دنیا سے تو جانا ہے

آؤ درِ زہرہ پر پھیلائے ہوئے دامن
ہے نسل کریموں کی، لجپال گھرانا ہے

ہوں شاہِ مدینہ کی میں پشت پناہی میں
کیا اس کی مجھے پروا دشمن جو زمانہ ہے

یہ کہہ کر درِ حق سے لی موت میں کچھ مُہلت
میلاد کی آمد ہے، محفل کو سجانا ہے

قربان اُس آقا پر کل حشر کے دن جس نے
اِس امت آسی کو کملی میں چھپانا ہے

سو بار اگر توبہ ٹوٹی بھی تو کیا حیرت
بخشش کی روایت میں توبہ تو بہانہ ہے

پُر نور سی راہیں بھی گنبد پہ نگاہیں بھی
جلوے بھی انوکھے ہیں منظر بھی سہانا ہے

ہم کیوں نہ کہیں اُن سے رودادِ الم اپنی
جب اُن کا کہا خود بھی اللہ نے مانا ہے

محرومِ کرم اس کو رکھئے نہ سرِ محشر
جیسا ہے “نصیر” آخر سائل تو پرانا ہے

از سید نصیر الدین نصیر رحمۃ اللہ علیہ

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.