Dar e Jaana Pe Fidai Ko Ajal Aayi Ho Naat Lyrics

 

 

Huzur Tajushariyah Mufti Akhtar Raza Khan Qadri Azhari

Dar e Jaanaan Pe Fidaa’i Ko Ajal Ayi Ho
Zindagi A Kai Janaazai Pe Tamaashaa’i Ho

Tairi Surat Jo Tasawwur Mei Utar Ayi Ho
Phir To Khalwat Mai Ajjab Anjuman Araa’i Ho

Naik Saa’at Se Ajal Aish e Abad Laa’i Ho
Dar e Jaanaan Pai Koi Mehw e Jabin Saa’i Ho

Sang e Dar Par Tere Yun Naasiya Farsaa’i Ho
Khud Ko Bholaa Huwaa Jaanaa Tera Shaidaa’i Ho

Khud Ba Khud Khuld Wahan Khinch Kai Chali Ayi Ho
Dasht e Taibaa Mai Jahaan Baadiya Paimaa’i Ho

Mowsam e Me Ho Woh Gaisu Ki Ghattaa Chaa’i Ho
Chashm e Maigun Se Pi’ain Jalsaa e Sahbaa’i Ho

Chaandni Raat Mai Phir Me Kaa Woh Ek Daur Chale
Bazm e Aflaak Ko Bhi Hasrat e Me Ayi Ho

Unn Kai Diwaane Khuli Baat Kahaan Karte Hain
Baat Samjhe Woh Jo Saahib e Daanaa’i Ho

Mehr e Khaawar Pai Jamaa’e Nahi Jamti Nazrain
Woh Agar Jalwaa Karain Koun Tamaashaa’i Ho

Dasht e Taibaa Mai Chalun Chal Kai Giron Girr Kai Chalun
Naatawaani Meri Sad Rashk e Tuwaanaa’i Ho

Gul Ho Jab Akhtar e Khasta Ka Chiraagh e Hasti
Uss Ki Ankhon Mai Tera Jalwaa e Zaibaa’i Ho

درِ جاناں پہ فدائی کو اجل آئی ہو
زندگی آکے جنازے پہ تماشائی ہو

تیری صورت جو تصوّر میں اُتر آئی ہو
پھر تو خلوت میں عجب انجمن آرائی ہو

نیک ساعت سے اجل عیش ابد لائی ہو
درِ جاناں پہ کوئی محو جبیں سائی ہو

سنگ در پر ترے یوں ناصیہ فرسائی ہو
خود کو بھولا ہوا جاناں ترا شیدائی ہو

خود بخود خلد وہاں کھنچ کے چلی آئی ہو
دشت طیبہ میں جہاں بادیہ پیمائی ہو

موسم مے ہو وہ گیسو کی گھٹا چھائی ہو
چشم ساقی سے پئیں جلسۂ صہبائی ہو

چاندنی رات میں پھر مے کا وہ اک دور چلے
بزمِ افلاک کو بھی حسرت مے آئی ہو

ان کے دیوانے کھلی بات کہاں کرتے ہیں
بات سمجھے وہی جو صاحب دانائی ہو

مہر خاور پہ جمائے نہیں جمتی نظریں
وہ اگر جلوہ کریں کون تماشائی ہو

دشت طیبہ میںچلوںچل کے گروںگرکے چلوں
ناتوانی مری صد رشک توانائی ہو

گل ہو جب اخترؔ خستہ کا چراغِ ہستی
اس کی آنکھوں میں ترا جلوۂ زیبائی ہو

Safeena e Bakhshish
LABELS: SAFEENA E BAKHSHISH

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.