Aasiyo Ko Dar Tumhara Mil Gaya Lyrics in Urdu

عاصیوں کو دَر تمہارا مل گیا​
بے ٹھکانوں کو ٹھکانا مل گیا​

​فضلِ رب سے پھر کمی کس بات کی​
مل گیا سب کچھ جو طیبہ مل گیاگی

کشف رازِ مر رآنی یون ہوا
تُم ملے تو حق تعالٰی مل گیا


​اُن کے دَر نے سب سے مستغنی کیا​
بے طلب بے خواہش اِتنا مل گیا​

​ناخدائی کے لیے آئے حضور​
ڈوبتو نکلو سہارا مل گیا​

​دونوں عالم سے مجھے کیوں کھو دیا​
نفسِ خود مطلب تجھے کیا مل گیا​

​خلد کیسا کیا چمن کس کا وطن​
مجھ کو صحراے مدینہ مل گیا​

​آنکھیں پُرنم ہو گئیں سر جھک گیا​
جب ترا نقشِ کفِ پا مل گیا​

​ہے محبت کس قدر نامِ خدا​
نامِ حق سے نامِ والا مل گیا​

​اُن کے طالب نے جو چاہا پا لیا​
اُن کے سائل نے جو مانگا مل گیا​

​تیرے دَر کے ٹکڑے ہیں اور میں غریب​
مجھ کو روزی کا ٹھکانا مل گیا​

​اے حسن فردوس میں جائیں جناب​
ہم کو صحراے مدینہ مل گیا

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.