مالکِ دُنیا قادر تُو حاضر تُو

مالکِ دُنیا قادر تُو حاضر تُو

اللہ اللہ اللہُ اللہ اللہ اللہُ
اللہ اللہ اللہُ اللہ اللہ اللہُ
اللہ اللہ اللہُ اللہ اللہ اللہُ

مالکِ دُنیا قادر تُو حاضر تُو اور ناظر تُو باطن تُو اور ظاہر تُو اوّل تُو اور آخر تو
عرش پہ تُو اور فرش پہ تُو

تُو ہی تُو بس تُو ہی تُو
تُو ہی تُو بس تُو ہی تُو

اللہ اللہ اللہُ اللہ اللہ اللہُ
اللہ اللہ اللہُ اللہ اللہ اللہُ
اللہ اللہ اللہُ اللہ اللہ اللہُ

تیرا نہیں ہے کوئی شریک تُو واحد ہے یکتا ہے
تُو ہی عبادت کے قابل ہے
تُو ہی لائقِ سجدہ ہے
ساجد ہم مسجود ہے تُو

تُو ہی تُو بس تُو ہی تُو
تُو ہی تُو بس تُو ہی تُو

اللہ اللہ اللہُ اللہ اللہ اللہُ
اللہ اللہ اللہُ اللہ اللہ اللہُ
اللہ اللہ اللہُ اللہ اللہ اللہُ

پیارے نبی کے پیاروں میں
غار ثور کے یاروں میں
علی علی کے نعروں میں
قرآن کے سپاروں میں

تُو ہی تُو بس تُو ہی تُو
تُو ہی تُو بس تُو ہی تُو

اللہ اللہ اللہُ اللہ اللہ اللہُ
اللہ اللہ اللہُ اللہ اللہ اللہُ
اللہ اللہ اللہُ اللہ اللہ اللہُ

گل گلشن گلزاروں میں
مست الست بہاروں میں
سورج چاند ستاروں میں
دیدہ زیب نظاروں میں
ساز کے بجتے تاروں میں
ٹوٹے دل کی پکاروں میں
رنج و علم کے ماروں میں
بے بس اور بیچاروں میں

تُو ہی تُو بس تُو ہی تُو
تُو ہی تُو بس تُو ہی تُو

کعبے میں اذانوں میں
حجّ کے سب ارکانوں میں
ہوش رُبا دیوانوں میں
مجذوب و مستانوں میں
بستی میں ویرانوں
صحرا اور میدانوں میں
ماؤں کے ارمانوں میں
بچوں کی مسکانوں میں

تُو ہی تُو بس تُو ہی تُو
تُو ہی تُو بس تُو ہی تُو

اللہ اللہ اللہُ اللہ اللہ اللہُ
اللہ اللہ اللہُ اللہ اللہ اللہُ
اللہ اللہ اللہُ اللہ اللہ اللہُ