قلب عاشق ہوا پارہ پارہ

قلب عاشق ہوا پارہ پارہ

قلب عاشق ہوا پارہ پارہ
الوداع الوداع ماہ رمضان

تیرے آنے سے دل خوش ہوا تھا اور ذوقِ عبادت بڑا تھا
آہ اب دل پہ غم کا ہے غلبہ
الوداع الوداع ماہ رمضان

نیکیاں کُچھ نا ہم کر سکے ہیں
آہ عصیاں میں دین کٹے ہیں
ہائے غفلت میں تُجھکو گزارا
الوداع الوداع ماہ رمضان

کوئی حُسنِ عمل نا کر سکا ہوں
چند آنسُو ِ نظر کر رہا ہوں یہی ہے میرا کُل اثاثہ
الوداع الوداع ماہ رمضان

جب گزر جائیگا ماہ گیارہ
تیری آمد کا پھِر شور ہوگا
کیا میری زِندگی کا بھروسہ
الوداع الوداع ماہ رمضان

بزمِ افطار سجتی تھی کیسی
خوب سحری کی رونق بھی ہوتی
ہو گیا سب سما ہو گیا سنا سُنا
الوداع الوداع ماہ رمضان

یاد رمضان کی تڑپا رہی ہے
آنسوؤں کی جھڑی لگ گئی ہے
کہہ رہا ہے ہر اِک قطرہ
الوداع الوداع ماہ رمضان

تیرے دیوانے سب رو رہے ہیں
مضطرب سب کے سب ہو رہے ہیں
کون دیگا اِنہیں اب دلاسا
الوداع الوداع ماہ رمضان

سگے عطار بدکار کاہل
رہ گیا یہ عبادت سے غافل
اس سے خوش ہو کے ہونا روانہ
الوداع الوداع ماہ رمضان

اے مسلمان تو زندہ رہوگے
اس مہینے کو پھِر دیکھ لینگے
کیا تیری زِندگی کیا بھروسا
الوداع الوداع ماہ رمضان

سال آئندہ شاہ حرم تُم
کرنا ہم سب پر کرم تُم
تُم مدینے میں رمضان دکھانا
الوداع الوداع ماہ رمضان

واسطہ تُجھکو میٹھے نبی کا
حشر میں ہمکو مت بھول جانا
روزِ محشر ہمیں بخشوانا
الوداع الوداع ماہ رمضان

تُم پے لاکھوں سلام ماہِ رمضان
تُم پے لاکھوں سلام ماہِ غفران
جائو حافظ خُدا اب تمہارا
الوداع الوداع ماہ رمضان
الوداع الوداع ماہ رمضان
الوداع الوداع ماہ رمضان

%d bloggers like this: