عشق مولیٰ میں ہوں خونبار کنار دامن

عشق مولیٰ میں ہوں خونبار کنار دامن

یا خدا جلد کہیں آئے بہار دامن

بہ چلی آنکھ بھی اشکوں کی طرح دامن پر

کہ نہیں تار نظر جز دو سہ تار دامن

اشک برساؤں چلے کوچہ جاناں سے نسیم

یا خدا جلد کہیں نکلے بخار دامن

دل شدوں کا یہ ہوا دامن اطہر پہ ہجوم

بیدل آباد ہوا نام و دیار دامن

مشک سا زلف شہ و نور فشان روئے حضور

الله الله حلب جیب و تتار دامن

تجھ سے اے گل میں ستم دیدہ دشت حرماں

خلش دل کی کہوں یا غم خار دامن

عکس افگن ہے ہلال لب شہ حبیب نہیں

مہر عارض کی شعاعیں ہیں نہ تار دامن

اشک کہتے ہیں یہ شیدائی کی آنکھیں دھو کر

اے ادب گرد نظر ہو نہ غبار دامن

اے رضا# آہ وہ بلبل کہ نظر میں جس کی

جلوہٴ جیب گل آئے نہ بہار دامن

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.